بدقسمت طیارے کا وائس ریکارڈر غائب، تحقیقاتی اداروں کو نہ مل سکا => سعودی عرب میں تمام مساجد باجماعت نمازوں کے لیے کھولنے کا فیصلہ => ملک میں کورونا کے 58545 مصدقہ مریض، جاں بحق افراد کی تعداد 1211 ہوگئی => طیارہ حادثے کے اصل ذمہ داروں کو بچانے کی کوشش کی جارہی ہے، پائلٹس ایسوسی ایشن => سچ بولنے کی وجہ سے میری کپتانی چھن گئی، یونس خان => طیارہ حادثہ ؛ شہید کے اہل خانہ کو 10 لاکھ امداد اور انشورنس کے 50 لاکھ ملیں گے => طیارہ حادثہ، پائلٹ نے بار بار ہماری ہدایات کو نظر انداز کیا، ایئر ٹریفک کنٹرولرز => طیارہ حادثہ کی تحقیقات کیلیے بنائی گئی کمیٹی صرف ایک ڈرامہ ہے، سندھ حکومت => پاکستان میں پہلی بار عید پر نہ کوئی فلم ریلیز ہوئی نہ اسٹیج ڈرامہ ہوسکا => کورونا وائرس بڑھنے پر لاک ڈاؤن سخت کرسکتے ہیں، ناصر حسین شاہ =>

اسلامک مضامین

The prophet Muhammad PBUH used to eagarly wait for month of ramadan
نبی پاک کو رمضان کا انتظار اور اشتیاق رمضان میں ہم الله پاک کا قرب ایسے حاصل کریں جیسے ہمارے نبی پاک نے سکھایا ہے
The daily routine of muslims in Month of Ramadan
رمضان میں معمولات روزہ الله اور بندے کے حقوق میں توازن پیدا کرتا ہے . روزے کے دن سب سے اچھا کام قرآن پاک کی تلاوت ہے
The respect of Holy month of Ramdan
رمضان مبارک کے آداب روزہ نفس کی تربیت کا سب سے اچھا طریقہ ہے

The Prophet Muhammad Pbuh Used To Eagarly Wait For Month Of Ramadan

نبی پاک کو رمضان کا انتظار اور اشتیاق

پےارے نبی کریم کو رمضان کا انتظار اور اشتیاق
ٓآقا اس مہینے کے حصول کی دعا کےا کرتے تھے
رمضان المبارک اللہ کریم کی عظیم نعمت ہے ہم اس مبارک مہینے کی قدر پےارے نبی کی اللہ کے حضور دعا سے جان سکتے ہے حدیث پاک ہے کہ جب نبی کریم رجب کا چاند دےکھتے تو ےہ دعامانگا کرتے تھے۔ترجمہ:(اے اللہ رجب اور شعبان کی برکت عطا فرما اور ہمیں رمضان کے مہینے تک پہنچا دیجئے۔اسی طرح رمضان سے پہلے شدت کے ساتھ اس دعا کا معمول ہوتا تھا ۔
ترجمہ(اے اللہ مجھے رمضان کے لئے سلامت فرما اور رمضان کے مےرے لئے سلامت فرما اور رمضان میں کی جانے والی دعاو¿ں کو قبول فرما )اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ رمضان آنے سے دو ماہ پہلے آپ کو رمضان کا انتظار و اشتیاق شروع ہو جاتا ہے اور اس کے حاصل ہوجانے کی آپ دعائےں کرتے تھے ۔سوال ےہ ہے کہ حضور اقدس کو ےہ اشتےاق و انتظار کیوں ہوتا تھا ؟اس کی وجہ ےہ ہے کہ اللہ نے رمضان المبارک کو اپنا مہینہ کہا ہے ۔مگر ہم ےہ سمجھتے ہے کہ رمضان المبارک کی خصوصیت صرف ےہ ہے کہ روزے رکھے جائےں گے اور تراوےح پڑھی جائےں گی ۔لےکن حقیقت ےہ ہے کہ رمضان اللہ کا مہینہ ہے گیارہ مہینے تک ہم دنیا کے معاملات میں مصروف رہےں اور اللہ سے دور رہیں ،خواب غفلت میں مبتلا رہےں ۔لےکن اس مہینے میں ہم اللہ کا قرب حاصل کرنے کے لئے محنت کرتے ہےں ۔
رمضان میں ہم اللہ کا قرب اس طرح حاصل کریں جیسی تعلیم ہمیں پےارے نبی نے دی ہےں ۔قرآن پاک سمجھ کر پڑھیں۔جو تقاضا قرآن پاک ہم سے کرتا ہے اسے پورا کریں ،دن تلاوت رات نوافل میں گزاریں،دنیاوی امور کو کم سے کم وقت دیں ،اس ماہ میں دنیا پر آخرت کو فوقیت دیں اور یاد الٰہی میں مشغولیت عادت بنا لیں ۔ذکر خدا کے ساتھ صداقت و خیرات سے ا
للہ سے تجارت کریں تاکہ ہماری مال میں برکت ہواور ضرورت مند اپنی حاجتیں پوری کر سکیں ۔گناہ سے اجتناب تو ہمیشہ ہی ناگزیر ہے مگر رمضان میں گناہ کے قریب نہ جائےں کثرت درود شریف ،تسبیحات معمول بنائےں ےہی وہ طرےقہ ہے جس سے ہم رمضان المبارک کا اصل مقصد حاصل کر سکتے ہےں۔
رمضان کا مہینہ صبر کا مہینہ ہے اور صبر کا بدلہ جنت اور ےہ معاشرے کے غریب اور حاجت مندوں کے ساتھ مالی ہمدردی کا مہینہ ہے ۔رمضان کا مہینہ نبی کریم کے لئے سب سے زیادہ ذوق افزاں تھا ۔آپ کا معمول تھا کہ جب رمضان کا مہینہ قریب آجاتا تو کم کس لیتے اور اہل ایمان کو اس کا شایان شان استقبال کرنے کا حکم فرماتے ۔ایک مرتبہ شعبان کی آخری تاریخ کو آپ نے خطبہ ارشاد فرمایا:”اے لوگو!ایک عظیم اور بابرکت مہینہ تم پر سایہ فگن ہونے کو ہے ،وہ مہینہ جس کی ایک رات ہزار مہینوں سے بہتر ہے جس میں روزہ رکھنا فرض ہے اور جس کی راتوں میں تراویح پڑھنا افضل ہے ۔جو شخص اس مہینے میں برضا و رغبت نیکی کا کام کرے گا ،اس کا ثواب عام مہینوں میں فرض کی ادائےگی کے برابر ملے گا اور جو اس ماہ مقدس میں فرض ادا کرے گا اسے ستر فرضوں کے برابر ثواب عنایت ہو گا۔رمضان کامہینہ صبر کا مہینہ ہے اور صبر کا بدلہ جنت ہے اور ےہ مہینہ معاشرے کے غریب اور حاجت مندوں کے ساتھ مالی ہمدردی کا مہینہ ہے ۔“(مشکوٰة)
ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ نے رمضان کی آمد پر ارشاد فرمایا:”تمہارے پاس رمضان کا مہینہ آگیا ہے اس کے روزے اللہ نے تم پر فرض کئے ہے اس مہینہ میں جنت کے دروازے کھول دئےے جاتے ہےں اور جہنم کے دروازے بند کر دئےے جاتے ہےں ۔سرکش شیطانوں کو جکڑ لیا جاتا ہے اور اس میں ایک ایسی رات ہے جو ہزار مہینوں سے بہتر ہے جو شخص اس رات کی خیرو بھلائی حاصل کرنے میں محروم رہا وہ تو بس محروم ہی رہ گیا۔“(کنز العمال)
حضرت انسؓ بیان کرتے ہےں کہ رسول اللہ نے ارشاد فرمایا :”اللہ ہی کے لئے تسبیح ہے کہ کیا خوب مہینہ ہے جس کا تم استقبال کر رہے ہوں اور کےا ہی وہ خوبیاں ہے جو وہ تمہارے پاس لایا ہے ۔یعنی رمضان کا مہینہ جس کی پہلی رات ہی اللہ تعالیٰ تمام اہل قبلہ (اہل ایمان)کی مغفرت فرما دیتا ہے ۔عرض کیا گیا :”اے اللہ کے رسول اللہ منافق کے لئے کےا ہے ؟“آپ نے فرمایا،”منافق تو کافر ہوتا ہے اور کافر کے لئے اس مبارک ماہ میں کچھ نہیں ہے ۔(کنزالعمال)
ابا امامہؓ اور واثلہ بن الاسقع ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ نے ارشاد فرمایا:”رمضان کے مہینے میں تقویٰ اور پرہیزگاری اختیار کرو اس لئے کہ ےہ اللہ کا مہینہ ہے ۔اللہ تعالیٰ نے گیارہ مہینے تمہارے لئے جس میں تم پیٹ بھر کر کھاتے پیتے ہو۔رمضان کا مہینہ اللہ کا مہینہ ہے اس میں (اللہ تعالیٰ کی نافرمانیوں سے اپنی حفاظت کرو“۔(کنز العمال)

facebbo twitter rss